Zaalim Thaa Vo Aur Zulm Ki Aadat Bhi Bahut Thi …


ظالم تھا وہ اور ظلم کی عادت بھی بہت تھی
مجبور تھے ہم اس شے محبت بھی بہت تھی

اس بت کے ستم سہہ کے دکھا ہی دیا ہم نے
گو اپنی طبیعت میں بغاوت بھی بہت تھی

واقف ہی نہ تھا رمز محبت سے وہ ورنہ
دل کے لئے تھوڑی سی عنایات بہت تھی

یوں ہی نہیںمشہور زمانہ میرا قاتل
اس شخص کو اس فن میں مہارت بہت تھی

کیا دوارِ غزل تھا کہ لہو دل میں بہت تھا
اور دل کو لہو کرنے کی فرصت بھی بہت تھی

ہر شام سناتے تھے حسینوں کو غزل ہم
جب مال بہت تھا تو سخاوت بھی بہت تھی

بلاوا کے ہم عاجزؔ کو پشیمان بھی بہت ہیں
کیا کیجئے کمبخت کی شہرت بھی بہت تھی
کلیم عاجز

Zaalim thaa vo aur zulm kii aadat bhii bahut thii
Majabuur the ham us se muhabbat bhii bahut thii


Us but ke sitam sah ke dikhaa hii diyaa ham ne
Go apnii tabiyat meN baGhaavat bhii bahut thii


Vaaqif hii na thaa ramz-e-muhabbat se vo varnaa
Dil ke liye thoRii sii inaayat bhii bahut thii


YuN hii nahiiN mashhuur E zamaanaa meraa qaatil
Us shaKhs ko is fan meN mahaarat bhii bahut thii


Kyaa daur-e-Ghazab thaa k lahuu dil meN bahut thaa
Aur dil ko lahuu karane kii fursat bhii bahut thii


Har shaam sunaate the hasiinoN ko Ghazal ham
Jab maal bahut thaa to saKhaavat bhii bahut thii


Bulavaa ke ham ‘Ajiz’ ko pashemaaN bhii bahut haiN
Kyaa kiijiye kam_baKht kii shohrat bhii bahut thii


Advertisements

3 thoughts on “Zaalim Thaa Vo Aur Zulm Ki Aadat Bhi Bahut Thi …

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s