Khabar E Tahayyur E Ishq Sun, Na JunooN Rahaa, Na Parii Rahi


خبرِ تحیرِ عشق سن، نہ جنوں رہا، نہ پری رہی
نہ تو تُو رہا، نہ تو میں رہا، جو رہی سو بے خبری رہی

شۂہ بے خودی نے عطا کیا، مجھے اب لباسِ برہنگی
نہ خرد کی بخیہ گری رہی، نہ جنوں کی پردہ دری رہی

چلی سمتِ غیب سے اک ہوا کہ چمن ظہور کا جل گیا
مگر ایک شاخِ نہالِ غم جسے دل کہیں سو ہری رہی

نظرِ تغافلِ یار کا گلہ کس زباں سے کروں بیاں
کہ شرابِ حسرت و آرزو، خمِ دل میں تھی سو بھری رہی

وہ عجب گھڑی تھی کہ جس گھڑی لیا درس نسخۂ عشق کا
کہ کتاب عقل کی طاق پر جو دھری تھی سو وہ دھری رہی

ترے جوشِ حیرتِ حسن کا اثر اس قدر ہے یہاں ہوا
کہ نہ آئینے میں جِلا رہی، نہ پری میں جلوہ گری رہی

کیا خاک آتشِ عشق نے دلِ بے نوائے سراج کو
نہ خطر رہا، نہ حذر رہا، جو رہی سو بے خطری رہی

سراج اورنگ آبادی

Khabar E tahayyur E ishq sun, na junooN rahaa, na parii rahii

Na to tuu rahaa, na to maiN rahaa, jo rahii so beKhabarii rahii

Shah E beKhudii ne ataa kiyaa mujhe ab libaas E barahnagii

Na Khirad kii bakhiyaagari rahii, na junooN kii pardadarii rahii

Chali simt E Ghaib se kya hava K chaman zahoor kaa jal gaya

Magar ek shaaKh E nihaal E Gham jise dil kaho so harii rahii

Voh ajab ghaRi thi maiN jis ghaRi liya dars nuskha E ishq ka

K kitaab aql kii taaq meN jooN dharii thii tyuuN dharii rahii

Nazr E taGhaaful E yaar kaa gila kis zubaaN se bayaaN karuN

K sharab E sad qadah E aarzu khum E dil meN thi so bhari rahii

Tere josh E hairat E husn ka asar is qadar se yahaN hua

K na aayiine meN rahii jilaa, na parii ko jalvagarii rahii

Kiyaa Khaak aatish E ishq ne dil E benavaa E Siraj ko

Na Khatar raha, na hazar raha, magar ek beKhatarii rahii

(Siraj Aurangabadi)

Advertisements

6 thoughts on “Khabar E Tahayyur E Ishq Sun, Na JunooN Rahaa, Na Parii Rahi

  1. میری بہت ہسندیدہ غزل
    تھینکس فار شیرئرنگ۔ ۔
    خبرِ تحیرِ عشق سن، نہ جنوں رہا، نہ پری رہی
    نہ تو تُو رہا، نہ تو میں رہا، جو رہی سو بے خبری رہی

    شۂہ بے خودی نے عطا کیا، مجھے اب لباسِ برہنگی
    نہ خرد کی بخیہ گری رہی، نہ جنوں کی پردہ دری رہی

    چلی سمتِ غیب سے اک ہوا کہ چمن ظہور کا جل گیا
    مگر ایک شاخِ نہالِ غم جسے دل کہیں سو ہری رہی

    نظرِ تغافلِ یار کا گلہ کس زباں سے کروں بیاں
    کہ شرابِ حسرت و آرزو، خمِ دل میں تھی سو بھری رہی

    وہ عجب گھڑی تھی کہ جس گھڑی لیا درس نسخۂ عشق کا
    کہ کتاب عقل کی طاق پر جو دھری تھی سو وہ دھری رہی

    ترے جوشِ حیرتِ حسن کا اثر اس قدر ہے یہاں ہوا
    کہ نہ آئینے میں جِلا رہی، نہ پری میں جلوہ گری رہی

    کیا خاک آتشِ عشق نے دلِ بے نوائے سراج کو
    نہ خطر رہا، نہ حذر رہا، جو رہی سو بے خطری رہی

    سراج اورنگ آبادی

  2. A bridge b/w Rumi and Hazrat Shah.

    A phenomenal sufi way of explaining the unveiling, wondering, oblivion and ecstasy.

  3. Need to understand it. Do we have an explanation somewhere; especially with respect to relation between Rumi & Hazrat Shah?

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s