Woh Jo Ek Shart Thi Wahshat Ki Utha Di Gayi Kya


وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا
میری بستی کسی صحرا میں بسا دی گئی کیا

وہی لہجہ ہے مگر یار تیرے لفظوں میں
پہلے اک آگ سی جلتی تھی،بجھا دی گئی کیا

جو بڑھی تھی کہ کہیں مجھ کو بہا کر لے جائے
میں یہیں ہوں تو وہی موج بہا دی گئی کیا

پاوں میں خاک کی زنجیر بھلی لگنے لگی
پھر میری قید کی معیاد بڑھا دی گئی کیا

دیر سے پہنچے ہیں ہم دور سے آئے ہوئے لوگ
شہر خاموش ہے سب خاک اڑا دی گئی کیا

عرفان صدیقی

Woh jo ek shart thi wahshat ki uThaadi gayi kya

Meri basti kisi sehraa meiN basaa di gayi kya

Wohi lehjaa hai magar yaar tere lafzoN meiN

Pahle ek aag si jalti thi, bujhaa di gayi kya

Jo baRhi thi K kahiN mujh ko bahaa kar le jaaye

MaiN yahi huN to wohi mauj bahaadi gayi kya

PaaoN meiN khaak ki zanjeer bhali lagne lagi

Phir meri qaid ki mee’aad baRhaa di gayi kya

Der se pahunche hain hum door se aaye hue log

Shahr khaamosh hai sab khaak uRaa di gayi kya

(By Irfan Siddiqui)

Advertisements

14 thoughts on “Woh Jo Ek Shart Thi Wahshat Ki Utha Di Gayi Kya

  1. وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا
    میری بستی کسی صحرا میں بسا دی گئی کیا

    وہی لہجہ ہے مگر یار تیرے لفظوں میں
    پہلے اک آگ سی جلتی تھی،بجھا دی گئی کیا

    جو بڑھی تھی کہ کہیں مجھ کو بہا کر لے جائے گی
    میں یہیں ہوں تو وہی موج بہا دی گئی کیا

    پاوں میں خاک کی زنجیر بھلی لگنے لگی
    پھر میری قید کی معیاد بڑھا دی گئی کیا

    دیر سے پہنچے ہیں ہم دور سے آئے ہوئے لوگ
    شہر خاموش ہے سب خاک اڑا دی گئی کیا

    عرفان صدیقی

    بہترین انتخاب
    جو بڑھی تھی کہ کہیں مجھ کو بہا کر لے جائے گی
    اس مصرع میں کوئی حرف اضافی تو نہیں؟

    • “Gi” lafz main ne nahi likha tha. aap se kuchh typing mistake hui. Pasandeedgi ka bahut shukriya. Maine aap ke comment ko apne main post mein paste kar diya. slaamat rahein

      • میرے ہونے میں کسی طور تو شامل ہو جاؤ

        تم مسیحا نہیں ہوتے ہو تو قاتل ہو جاؤ

        دشت سے دُور بھی کیا رنگ دکھاتا ہے جنوں

        دیکھنا ہے تو کسی شہر میں داخل ہو جاؤ

        جس پہ ہوتا ہی نہیں خونِ دو عالم ثابت

        بڑھ کے اک دن اسی گردن میں حمائل ہو جاؤ

        وہ ستم گر تمھیں تسخیر کیا چاہتا ہے

        خاک بن جاؤ اور اس شخص کو حاصل ہو جاؤ

        عشق کیا کارِ ہوس بھی کوئی آسان نہیں

        خیر سے پہلے اسی کام کے قابل ہو جاؤ

        ابھی پیکر ہی جلا ہے تو یہ عالم ہے میاں

        آگ یہ روح میں لگ جائے تو کامل ہو جاؤ

        میں ہوں یا موجِ فنا اور یہاں کوئی نہیں

        تم اگر ہو تو ذرا راہ میں حائل ہو جاؤ

        عرفان صدیقی

        Date: Thu, 25 Apr 2013 07:08:20 +0000
        To: aroosanadeem@hotmail.com

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s