Mujhe Kyun Na Aawe Saqui, Nazar Aaftaab Ulta


مجھے کیوں نہ آوے ساقی نظر آفتاب الٹا
کہ پڑا ہے آج خُم میں قدحِ شراب الٹا

عجب الٹے ملک کے ہیں اجی آپ بھی کہ تُم سے
کبھی بات کی جو سیدھی تو ملا جواب الٹا

چلے تھے حرم کو رہ میں، ہوئے اک صنم کے عاشق
نہ ہوا ثواب حاصل، یہ ملا عذاب الٹا

یہ شب – گذشتہ دیکھا کہ وہ کچھ خفا ہیں گویا
کہیں حق کرے کہ ہووے یہ ہمارا خواب الٹا

یہ عجیب ماجرا ہے کہ بروزِ عیدِ قرباں
وہی ذبح بھی کرے ہے، وہی لے ثواب الٹا

کھڑے چُپ ہو دیکھتے کیا، مرے دل اجڑ گئے کو
وہ گنہہ تو کہہ دو جس سے یہ ہوا خراب الٹا

غزل اور قافیوں میں نہ کہے سو کیونکے انشا
کہ ہوا نے خود بخود آ، ورقِ کتاب الٹا

انشا اللہ خان انشا

 

Mujhe kyuN na aawe saaqui nazar aaftaab ulTa

K paRa hai aaj khum mein Qadah e sharaab ulTa

Ajab ulTe mulk ke haiN aji aap bhi k tum se

Kabhi baat ki jo seedhi, to mila jawaab ulTa

Chale the heram ko,rah mein hue ik sanam k ashiq

Na hua sawaab haasil, yeh milaa azaab ulTa

Ye shab e guzishta dekha K wo kuch khafa hain goya

KahiN haq kare K howe, yeh hamaara khaab ulTa

Yeh ajeeb maajraa hai k baroz e Eid e qurbaaN

Wohi zabh bhi kare hai wohi le sawaab ulTa

KhaRe chup ho dekhte kya, mere dil ujaR gaye ko

woh gunah to kah do jis se yeh hua kharab ulTa

Ghazal aur qaafiyoN mein na kahe so kyun k ‘Insha’

K hawa ne khud bakhud aa, waraq e kitaab ulTa

(Insha allah khan insha)

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s