Maraajeat – A Poem by Hassan Akhtar Jaleel


مراجعت
———-
چلو اک بار پھر اپنی انہیں قبروں کی جانب لوٹ جائیں ھم
جہاں اس حشر بے داور سے پہلے
نیند کی صدیاں گزاری تھیں
چلو پھر اپنے کفنوں میں لپٹ جائیں
لحد کی خاک چہروں پر بکھیریں اور سو جائیں
سوا نیزے پہ سورج ھے
مگر اب تک ھماری تشنہ کامی نے
میان عرصئہ محشر،کہیں بھی چشمئہ کوثر نہیں دیکھا
کہیں میزان کی تنصیب کا منظر نہیں دیکھا
کسی ظالم کے بائیں ھاتھ اعمال کا دفتر نھیں دیکھا
سوا نیزے پہ سورج ھے
مگر وہ عدل کا دن، داد خواہی کی گھڑی اب تک نہیں آئی
چلو اک بار پھر اپنی انہیں قبروں کی جانب لوٹ جائیں ھم
کہ وہ اک کاروبار خسروی تھا اور ھم اسکو
کسی کے عہد یوم الدین کی تکمیل سمجھے تھے
وہ اک دجال کی آواز تھی جس کو
ھم اپنی سادگی صور اسرافیل سمجھے تھے
(حسن اختر جلیل)

Maraajeat

Chalo ik bar phir apni unhi qabron ki janib lot jaen hum
JahaaN es hashr e be dawar se pehle
Neend ki sadyan guzari theeN

Chalo phir apne kafnoN meiN lipaT jaaen
Lahad ki khaak chehroN par bikhereN aur so jaaen

Sawa neze pe sooraj hai

Magar ab tak humari tishna-kami ne
Miaan e arsa e mehshar, kaheeN bhi chashma-e-kousar nahee dekha
Kehen meezan ki tanseeb ka manzr nahee dekha

Kisi zalim ke baaeN hath meiN aamal ka daftar nahee dekha

Sawa neze pe sooraj hai

Magar wo adl ka din, daad-khaahi ki ghari ab tak nahi aai

Chalo ik bar phir apni unhi qabron ki janib lot jaaen hum
K wo ik karobar-e-khusrawi tha aur hum usko
Kisi ke ahd-e-yomiddin ki takmeel samjhe the

Wo ik dajjal ki awaz thee jisko
Hum apni saadgi se soor e israfeel samjhe the

(Hassan Akhtar Jaleel)

P.s: The poem was written after general Zia dismissed Jonejo assembly on 29th of May, 1988.

Advertisements

6 thoughts on “Maraajeat – A Poem by Hassan Akhtar Jaleel

  1. Dear Ayaz,
    Is it possible to give the name of Raja Hasan Akhtar in the list of poets on this blog along with other prominent poets? This is a request for you to think over!!
    Urdu department, University of Sargiodha has compiled the Kuiliyaat of Raja Hasan Akhtar Jalil. This is done by Ume Aziz a student of M.A Urdu
    under the supervision of Dr. Ghulam Abbas, Assistant Professor of the department.
    Regards!!
    Muhammad Ali Raja

  2. غزل

    بے ربط منزلوں کے نشاں ڈھونڈتا ہوں میں
    تم مجھ کو ڈھونڈتے ہو کہاں ڈھونڈتا ہوں میں

    یہ وقت روشنی کی کرن ڈھونڈنے کا ہے
    اب ظلمتوں میں کاہکشاں ڈھونڈتا ہوں میں

    جو میری دسترس سے بہت دور ہو گئیں
    ان منزلوں کے نام و نشاں ڈھونڈتا ہوں میں

    ماٰٰؤف کر دیا ہے غم روز گار نے
    اپنی گلی میں اپنا مکاں ڈھونڈتا ہوں میں

    پھر ڈھل گئ ہے رات خموشی کے سائے میں
    ڈوبا ہے جا کے چاند کہاں ڈھونڈتا ہوں میں

    جو مجھ سے دور رہ کے بھی ہے میرے آس پاس
    ایسا یقین ایسا گماں ڈھونڈتا ہوں میں

    آفتاب راجا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s