Kaash Ek Aisi Shab Aae Jab Tu Ho Pehlu Mein


 

کاش اک ایسی شب آئے جب تُو ہو پہلو میں

سانسیں سانسوں میں مل جائیں، آنسو آنسو میں

 

یاد کی لَو سے آئینے کا چہرہ ہو پُرنور

نہا رہی ہو رات کی رانی خواب کی خوشبو میں

 

نیند مری لے کر چلتی ہے شام ڈھلے، اور پھر

رات الجھ کر رہ جاتی ہے اُس کے گیسو میں

 

رہے ہمارے ہونٹوں پر اک نام کا دن بھر ورد

شب بھر دل کی رحل پہ رکھا اک چہرہ چومیں

 

آپ اپنی ہی ضَو سے جگمگ کرنا ساری رات

دھڑک رہا ہو جیسے میرا دل اِس جگنو میں

 

بولتے رہنا ہنستے رہنا بے مقصد بے بات

جیسے دل آہی جائے گا میرے قابو میں

 

ویسے تو اکثر ہوتا تھا ہلکا، میٹھا درد

اب تو جیسے آگ بھری ہو یاد کے چاقو میں

 

ایک دعا تھی جس نے بخشی حرف کو یہ تاثیر

یہ تاثیر کہاں ہوتی ہے جادو وادو میں

 

جب مجھ کو بھی آجائے گا چلنا وقت کے ساتھ

آجائے گی کچھ تبدیلی میری بھی خُو میں

 

تم کیا سمجھو تم کیا جانو کون ہوں میں کیا ہوں

وہ اقلیم الگ ہے جس میں ہیں میری دھومیں

 

قحط ِ سماعت کے عالم میں یہی ہے اک تدبیر

خود ہی شعر کہیں اور خود ہی پڑھ پڑھ کر جھومیں

 

لوگ ہمیں سمجھیں تو سمجھیں بے حرف و بے صوت

ہم شامل تو ہو نہیں سکتے ہیں اِس ہا ہُو میں

 

جن کے گھر ہوتے ہیں وہ گھر جاتے ہیں عرفان

آپ بھی شب بھر مت ایسے ان سڑکوں پر گھومیں

~*~

kaash ik aisi shab aae jab tu ho pehlu meiN
SaNsaiN saNsoN meiN mil jayaiN, aansu aansu meiN

Yaad ki lau se aayiney ka chehraa ho pur-noor
Naha rahi ho raat ki raani khwaab ki khushbu meiN

Neend meri le kar chalti hai shaam Dhaley aur phir
Raat ulajh kar reh jati hai us ke gesu meiN

Rahe hamare honToN par ik naam ka din bhar wird
Shab bhar dil ki rehl pe rakkha ik chehra choomaiN

Aap hi apni zau se jagmag karna saari raat
DhaRak raha ho jaisey maira dil is jugnu meiN

Bolte rehna, hanste rehna, be maqsad, be baat
Jaise aa hi jaae ga dil maire qabu meiN

Waisey to aksar hota tha halka meeTha dard
Ab to jaisey aag bhari hai yaad ke chaaqu meiN

Aik dua thi jis ney bakhshi harf ko ye taaseer
Ye taseer kahaN hoti hai jadu wadu meiN

Jab mujh ko bhi aa jae ga chalna waqt ke sath
Aa jaae gi kuch tabdeeli mairi bhi khu meiN

Tum kya samjho tum kya jano kon huN kya huN maiN
Woh iqleem alag hai jis meiN haiN mairi dhoomaiN

Qeht-e-sama’at ke aalam meiN yehi hai ik tadbeer
Khud hi shair kahaiN aur khud hi paRh paRh kar jhumaiN

Log hamaiN samjhaiN to samjhaiN be-harf-o-be-saut
Hum shamil to ho nahiN sakte haiN is ha hu meiN

Jin ke ghar hote haiN woh ghar jate haiN ‘Irfan’
Aap bhi shab bhar mat aise in saRkoN par ghoomaiN

(Irfan Sattar)

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s