دیکھ مستی وجود کی میری
تا ابد دھوم مچ گئی میری

تُو توجہ اِدھر کرے نہ کرے
کم نہ ہو گی سپردگی میری

دل مرا کب کا ہو چکا پتھر
موت تو کب کی ہو چکی میری

اب تو برباد کر چکے، یہ کہو
کیا اسی میں تھی بہتری میری؟

میرے خوش رنگ زخم دیکھتے ہو؟
یعنی پڑھتے ہو شاعری میری؟

اب تری گفتگو سے مجھ پہ کھُلا
کیوں طبیعت اداس تھی میری

زندگی کا مآل اتنا ہے
زندگی سے نہیں بنی میری

چاند حسرت زدہ سا لگتا ہے
کیا وہاں تک ہے روشنی میری؟

اب میں ہر بات بھول جاتا ہوں
ایسی عادت نہ تھی، کہ تھی میری؟

میری آنکھوں میں آکے بیٹھ گیا
شامِ فرقت اجاڑ دی میری

پہلے سینے میں دل دھڑکتا تھا
اب دھڑکتی ہے بے دلی میری

کیا عجب وقت ہے بچھڑنے کا
دیکھ، رکتی نہیں ہنسی میری

خود کو میرے سپرد کربیٹھا
بات تک بھی نہیں سنی میری

تیرے انکار نے کمال کیا
جان میں جان آگئی میری

میں تو پل بھر نہیں جیا عرفان
عمر کس نے گزار دی میری

~~~~***~~~~

Daikh masti wajood ki mairi
Ta-abad dhoom mach gayi mairi

Tu tawwajo idhar kare, na kare
Kam na hogi supurdagi mairi

Dil mera kab ka ho chuka patthar
Maut to kab ki ho chuki mairi

Ab to barbad kar chuke, ye kaho
Kya isi meiN thi behtari mairi?

Mere khush-rang zakhm daikhte ho
Ya’ani paRhtey ho shayeri mairi?

Ab teri guftugu se mujh pe khula
KyuN tabiyat udaas thi mairi

Zindagi ka ma’al itna hai
Zindagi se nahiN bani mairi

Chaand hasrat-zada sa lagta hai
Kya wahaN tak hai roshni mairi?

Ab maiN har baat bhool jata hooN
Aisi aadat na thi…K thi mairi?

Mairi aankhoN meiN aa ke baiTh gaya
Shaam-e-furqat ujaaR di mairi

Pehle seene meiN dil dhaRakta tha
Ab dhaRakti hai be-dili mairi

Kya ajab waqt hai bichaRney ka
Daikh rukti nahiN hansi mairi

Khud ko maire supurd kar baiTha
Baat tak bhi nahiN suni mairi

Tere inkaar ne kamaal kiya
Jaan meiN jaan aa gayi mairi

MaiN to pal bhar nahiN jiya ‘Irfan’
Umr kis ne guzaar di mairi

(Irfan Sattar)

Ajab Hai Rang E Chaman Ja Ba Ja Udaasi Hai

عجب ہے رنگ ِ چمن، جا بجا اُداسی ہے

مہک اُداسی ہے، باد ِ صبا اُداسی ہے

نہیں نہیں، یہ بھلا کس نے کہہ دیا تم سے؟

میں ٹھیک ٹھاک ہوں، ہاں بس ذرا اُداسی ہے

میں مبتلا کبھی ہوتا نہیں اُداسی میں

میں وہ ہوں جس میں کہ خود مبتلا اُداسی ہے

طبیب نے کوئی تفصیل تو بتائی نہیں

بہت جو پوچھا تو اتنا کہا، اُداسی ہے

گداز ِ قلب خوشی سے بھلا کسی کو ملا؟

عظیم وصف ہی انسان کا اداسی ہے

شدید درد کی رو ہے رواں رگ ِ جاں میں

بلا کا رنج ہے، بے انتہا اُداسی ہے

فراق میں بھی اُداسی بڑے کمال کی تھی

پس ِ وصال تو اُس سے سِوا اداسی ہے

تمہیں ملے جو خزانے، تمہیں مبارک ہوں

مری کمائی تو یہ بے بہا اُداسی ہے

چھپا رہی ہو مگر چھپ نہیں رہی مری جاں

جھلک رہی ہے جو زیر ِ قبا اُداسی ہے

دماغ مجھ کو کہاں کائناتی مسئلوں کا

مرا تو سب سے بڑا مسئلہ اُداسی ہے

فلک ہے سر پہ اُداسی کی طرح پھیلا ہُوا

زمیں نہیں ہے مرے زیر ِ پا، اُداسی ہے

غزل کے بھیس میں آئی ہے آج محرم ِ درد

سخن کی اوڑھے ہوئے ہے ردا، اُداسی ہے

عجیب طرح کی حالت ہے میری بے احوال

عجیب طرح کی بے ماجرا اُداسی ہے

وہ کیف ِ ہجر میں اب غالباً شریک نہیں

کئی دنوں سے بہت بے مزا اُداسی ہے

وہ کہہ رہے تھے کہ شاعر غضب کا ہے عرفان

ہر ایک شعر میں کیا غم ہے، کیا اُداسی ہے

Ajab hai rang e chaman, jaa-ba-ja udaasi hai

Mahek udaasi hai, baad-e-sabaa udaasi hai

Nahi nahi yeh bhala kis ne kah diya tumse

MaiN thik thak hun, haaN bus zara udaasi hai

MaiN mubtila kabhi hota nahi udaasi mein

MaiN wo hun jis mein K khud mubtila udaasi hai

Tabeeb ne koi tafseel to bataayi nahi

Bahut jo poochhha to itna kaha udaasi hai

Gudaaz Qalb khushi se bhala kisi ko mila?

Azeem wasf hi insaan ka udaasi hai

Shadeed dard ki rau hai ravaaN rag-e-jaaN mein

Bala ka ranj hai be inteha udaasi hai

Firaaq mein bhi udaasi baRe kamaal ki thi

Pas-e-visaal to us se siwaa udaasi hai

TumheN mile jo khazaane tumhein mubrak hoN

Meri kamaayi to yeh be-bahaa udaasi hai

Chhupa rahi ho magar chhup nahi rahi meri jaaN

Jhalak rahi hai jo zer-e-qaba udaasi hai

DimaaGh mujh ko kahaaN kaainaati mas’aloN ka

Mera to sab se baRa mas’alaa udaasi hai

Falak hai sar pe udaasi ki tarah phaila hua

ZameeN nahi mere zer-e-paa udaasi hai

Ghazal ke bhes mein aayi hai aaj mahram-e-dard

Sukhan ki oRhe hue hai ridaa, udaasi hai

Ajeeb tarh ki haalat hai meri be-ahwaal

Ajeeb tarha ki be-maajraa udaasi hai

Wo kah rahe the k shair ghazab ka hai ‘Irfan’

Har aek she’r mein kya Gham hai kya udaasi hai

(Poet:Irfan Sattar)

Kaash Ek Aisi Shab Aae Jab Tu Ho Pehlu Mein

 

کاش اک ایسی شب آئے جب تُو ہو پہلو میں

سانسیں سانسوں میں مل جائیں، آنسو آنسو میں

 

یاد کی لَو سے آئینے کا چہرہ ہو پُرنور

نہا رہی ہو رات کی رانی خواب کی خوشبو میں

 

نیند مری لے کر چلتی ہے شام ڈھلے، اور پھر

رات الجھ کر رہ جاتی ہے اُس کے گیسو میں

 

رہے ہمارے ہونٹوں پر اک نام کا دن بھر ورد

شب بھر دل کی رحل پہ رکھا اک چہرہ چومیں

 

آپ اپنی ہی ضَو سے جگمگ کرنا ساری رات

دھڑک رہا ہو جیسے میرا دل اِس جگنو میں

 

بولتے رہنا ہنستے رہنا بے مقصد بے بات

جیسے دل آہی جائے گا میرے قابو میں

 

ویسے تو اکثر ہوتا تھا ہلکا، میٹھا درد

اب تو جیسے آگ بھری ہو یاد کے چاقو میں

 

ایک دعا تھی جس نے بخشی حرف کو یہ تاثیر

یہ تاثیر کہاں ہوتی ہے جادو وادو میں

 

جب مجھ کو بھی آجائے گا چلنا وقت کے ساتھ

آجائے گی کچھ تبدیلی میری بھی خُو میں

 

تم کیا سمجھو تم کیا جانو کون ہوں میں کیا ہوں

وہ اقلیم الگ ہے جس میں ہیں میری دھومیں

 

قحط ِ سماعت کے عالم میں یہی ہے اک تدبیر

خود ہی شعر کہیں اور خود ہی پڑھ پڑھ کر جھومیں

 

لوگ ہمیں سمجھیں تو سمجھیں بے حرف و بے صوت

ہم شامل تو ہو نہیں سکتے ہیں اِس ہا ہُو میں

 

جن کے گھر ہوتے ہیں وہ گھر جاتے ہیں عرفان

آپ بھی شب بھر مت ایسے ان سڑکوں پر گھومیں

~*~

kaash ik aisi shab aae jab tu ho pehlu meiN
SaNsaiN saNsoN meiN mil jayaiN, aansu aansu meiN

Yaad ki lau se aayiney ka chehraa ho pur-noor
Naha rahi ho raat ki raani khwaab ki khushbu meiN

Neend meri le kar chalti hai shaam Dhaley aur phir
Raat ulajh kar reh jati hai us ke gesu meiN

Rahe hamare honToN par ik naam ka din bhar wird
Shab bhar dil ki rehl pe rakkha ik chehra choomaiN

Aap hi apni zau se jagmag karna saari raat
DhaRak raha ho jaisey maira dil is jugnu meiN

Bolte rehna, hanste rehna, be maqsad, be baat
Jaise aa hi jaae ga dil maire qabu meiN

Waisey to aksar hota tha halka meeTha dard
Ab to jaisey aag bhari hai yaad ke chaaqu meiN

Aik dua thi jis ney bakhshi harf ko ye taaseer
Ye taseer kahaN hoti hai jadu wadu meiN

Jab mujh ko bhi aa jae ga chalna waqt ke sath
Aa jaae gi kuch tabdeeli mairi bhi khu meiN

Tum kya samjho tum kya jano kon huN kya huN maiN
Woh iqleem alag hai jis meiN haiN mairi dhoomaiN

Qeht-e-sama’at ke aalam meiN yehi hai ik tadbeer
Khud hi shair kahaiN aur khud hi paRh paRh kar jhumaiN

Log hamaiN samjhaiN to samjhaiN be-harf-o-be-saut
Hum shamil to ho nahiN sakte haiN is ha hu meiN

Jin ke ghar hote haiN woh ghar jate haiN ‘Irfan’
Aap bhi shab bhar mat aise in saRkoN par ghoomaiN

(Irfan Sattar)

Imkaan Dekhne Ko Ruka Tha MaiN Jast Ka

Imkaan dekhnay ko ruka tha maiN jast ka

Ailaan kar diya gaya meri shikast ka

Saye se apne qadd ka lagata hai tu hisab

Andaza ho gaya hai tere zehn-e-past ka

Tujh ko badan ki had se nikalna kahaN nasib

Samjhe ga kaise rooh ko aalooda hast ka

Tu hai K kal ki baat ka rakhta nahiN hai paas

MaiN hooN ke paasdaar hooN ehd-e-alast ka

Jis se garoh-e-badaa-faroshaaN hasad kare

Taari hai mujh pe nassha usi chashm-e-mast ka

Ja, shehr-e-kam-nigaah meiN shuhrat samaiT le

Yeh kaam hai bhi tujh se hi mauqa-parast ka

Shah-e-junooN ka takht bicha hai ba-ehtamaam

Pehlu meiN intizaam hai meri nashast ka

Wus’at mili hai zabt ko mere baqadr-e-dard

Bolo koyi jawaab hai is band-o-bast ka?

‘Irfan’, teri laaj bhi Allah key supurd

Sattar hai wohi to har ik tang-dast ka

(Irfan Sattar)

Koi Mila To Kisi Aur Ki Kami Hui Hai

Koi mila to kisi aur ki kami hui hai
So dil ne be-talabi ikhtiyaar ki hui hai
 
JahaaN se dil ki taraf zindagi utarti thi
Nigaah ab bhi usi baam par jami hui hai
 
Hai intezaar use bhi tumhaari khushbu ka
Hawaa gali mein bahut der se ruki hui hai
 
Tum aagaye ho to ab aayiina bhi dekhenge
Abhi abhi to nigaahoN mein raushni hui hai
 
Hamara ilm to marhun e lauh e dil hai miyaN
Kitaab e aql to bas taaq par dhari hui hai
 
Banao saaye, haraarat badan mein jazb karo
K dhoop sehn mein kab se yuNhi paRi hui hai
 
Nahi nahi, main bahut khush raha huN tere beghair
Yaqeen kar K yeh haalat abhi abhi hui hai
 
Woh guftagoo jo meri sirf apne aap se thi
Teri nigaah ko pahunchi to shairy hui hai

(By: Irfan Sattar)

YuNhi Be yaqeeN, YuNhi Be NishaaN, Meri Aadhi Umr Guzar Gayi …


YuNhi be yaqeeN, yuNhi be nishaaN, meri aadhi umr guzar gayi


KahiN ho na jaauN maiN raayegaaN, meri aadhi umr guzar gayi


Kabhi saaebaN bhi na tha baham, kabhi kahkashaaN thi qadam qadam


Kabhi be makaaN!! kabhi laa makaaN, meri aadhi umr guzar gayi


Kabhi zikr E hurmat E harf meN, kabhi fikr E aamad O sarf meN


YuNhi rizq O ishq ke darmiyaaN, meri aadhi umr guzar gayi


Use paaliyaa use kho diyaa, kabhi haNs diya kabhi ro diya


BaRi mukhtasar si hai daastaaN, meri aadhi umr guzar gayi


KahaaN kayenaat meN ghar karuN, maiN yeh jaan luN to safar karuN


Isi soch meN tha K naagehaaN, meri aadhi umr guzar gayi

Ghazal By :  Irfan Sattar ]